363

اسپین ایمبیسی میں زیرالتو فیملی کیسز کے حل کیلیے پاکستانی وفدکی میٹنگ یکم مارچ کو ہوئی،شہزاداکبروڑائچ

اسلام آباد(ورلڈ پوائنٹ نیوز)ہسپانوی سفارت خانہ میں فیملی کیسز اور دیگر ویزوں میں تاخیر کے حوالے سے پاکستانی وفد جس میں شہزاداکبر وڑائچ کے ہمراہ یاسر شیر وڑائچ،چوہدری خرم اور میڈرڈ سے سعید حیدر نے ہسپانوی سفیر اور قونصل جنرل سے ایک تفصیلی ملاقات کی۔
ملاقات میں فیملی کیسز کو حل کرنے کے حوالے سے قونصل جنرل لائورا مایورال نے دشواری کا ذکر کرتے ہوئے بتایا کہ بہت سے کیسز میں جمع کروائے گئے کاغذات ریکوائر منٹس کے مطابق پورے نہیں ہوتے اور کچھ کیسز میں غلط ڈاکومنٹس جمع کروائے جاتے ہیں۔جن کا انکشاف انکوائری رپورٹ مکمل ہونے پر ہوتا ہے۔تمام کاغذات پورے ہونے کی صورت میں ہماری ٹیم کی کوشش ہوتی ہے کہ چھ مہینوں میں کیس کو حل کرتے ہوئے ویزوں کا اجراء کر دیا جائے۔تاہم جب ڈاکومنٹس میں کوئی کمی(Falta)یا درستگی کالیٹر بھیجا جاتا ہے۔تو درخواست گزار کیطرف سے کاغذات کی کمی(Falta)یا درستگی جمع کروانے پر ہمیں سارے کیس کا ازسر نو جائزہ لینا پڑتا ہے۔جس سے ہمارا کام بہت بڑھ جاتا ہے۔
ہسپانوی شہریت کے حامل افراد کے کیسز میں تاخیر کی وجہ اسپین میڈرڈ میں وزارت خارجہ (Ministerio de Asuntos Exteriores) کیطرف سے انکوائری رپورٹ جو کہ تقریباً اڑھائی سے تین سال کے عرصے میں ملنا بتائی ہے۔انھوں نے بتایا کہ اسپین میڈرڈ میں وزارت خارجہ کیطرف سے انکوائری رپورٹ ملنے کی بعد ہماری کوشش ہوتی ہے کہ جلد از جلد فیملی کیس کو حل کرتے ہوئے ویزے جاری کر دیے جائیں۔
پاکستان قیام کے دوران ریذڈینسی گم یا ایکسپائر ہونے کی صورت میں بھی اسلام آباد ،سفارت خانہ اسپین سے بھی انکوائری رپورٹ طلب کرتا ہے ۔اس ضمن میں بھی جلد سے جلد ویزے کے اجراء کی کوشش کرتے ہیں ۔تاہم یورپ کے دیگر ممالک کی نسبت اسپین میں پاکستانی کمیونٹی کی ایک خاصی بڑی تعداد مقیم ہونے کی وجہ سے سفارت خانہ میں کام کا بوجھ بہت زیادہ ہوتا ہے۔کام کے رش کو ختم کرنے اور تمام کیسز کو جلد حل کرنے کیلیے ہمیں اسلام آباد سفارت خانہ میں مزید عملے کی بھی ضرورت ہے۔اسلام آباد میں مقیم موجودہ کونسل جنرل کا تعلق سبادیل سے ہے اور فیڈریشن دیل بائیس مستقبل میں کونسل جنرل کے ساتھ ایک پرسنل میٹنگ کا بھی جائزہ لے رہی ہے۔
ملاقات کے اختتام پر شہزاداکبر وڑائچ نے فیڈریشن دل بائیس کے نائب صدر سفیان یونس اور پاکستانی کمیونٹی کیطرف سے تمام کیسز کو مزید جلد حل کرنے کی درخواست کی۔یاد رہے گزشتہ چار سالوں سے ہسپانوی سفارت خانہ کے ساتھ میٹنگز کا یہ مثبت سلسلہ جاری ہے۔

خبر کو سوشل میڈیا پر شئیر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں