364

اوورسیز پاکستانیو تمھیں سلام

تحریر: آصفہ ہاشمی

امتحد ہو کر جئیں ، تو ایک طاقت ہم بھی ہیں
گر سلامت یہ وطن ہے ، تو سلامت ہم بھی

سال 14 اگست کو پاکستان میں آزادی کے دن کی نسبت سے منایا جاتا ہے۔ یہ وہ دن ہے جب پاکستان 1947ءمیں انگلستان سے آزاد ہو کر معرض وجود میں آیا۔14 اگست کا دن پاکستان میں سرکاری سطح پر قومی تہوار کے طور پر بڑے دھوم دھام سے منایا جاتا ہے پاکستانی عوام اس روز اپنا قومی پرچم فضاء میں بلند کرتے ہوئے اپنے قومی محسنوں کو خراج تحسین پیش کرتے ہیں۔ اور اِس آزادی پر خوشیاں منانایقینا زندہ وجاوید قوم کی نشانی ہے۔کیونکہ مفکر پاکستان(علامہ اقبال)فرماتے ہیں
غلامی میں کام آتی ہیں نہ شمشیریں نہ تدبیریں
جو ہو ذوقِ یقین پیدا توکٹ جاتی ہیں زنجیریں

اللہ عزوجل ارشاد فرماتاہے :
ترجمہ) اور اپنے رب کی نعمت کاخوب چرچاکرو ایک اور مقام پر ارشاد ہوتاہے۔ واشکرولی ولاتکفرون
(ترجمہ)اور میرا شکر کرو اور ناشکری مت کرو
یقینا آزادی بھی اللہ تبارک وتعالیٰ کی ایک بہت بڑی نعمت ہے اور یہ اس پاک ذات کا ہم پر بہت بڑافضل ہے کہ اُس نے ہمیں یہ سر زمین عطاء فرمائی اوراللہ تعالیٰ نے اس پاک سرزمین کو معدنی وسائل سے مالامال فرمادیا۔
پاکستان کیساتھ ساتھ دنیا بھر میں جشن آزادی کے موقع پر پاکستانی سفارتخانہ تقاریب منعقد کرتے ہیں پاکستانی کمیونٹی اور غیرملکی بیوروکریسی کو مدعو کیا جاتا ہے ۔اسکے ساتھ ساتھ اوورسیز پاکستانی قوم جو اپنے بل بوتے پر گھروں میں ریسٹورنٹس میں اپنی ساتھیوں کیساتھ مختلف تقاریب کرتے نظر آتے ہیں
اس بار فرانس میں مقیم پاکستانی کمیونٹی کے مختلف شعبوں سے تعلق رکھنے والے خواتین وحضرات نے آپس میں مل کر پہلی بار بڑے پیمانے پر پاکستان کے جشن آزادی کو منانے کا فیصلہ کیا اور اپنے اس ایجنڈے میں ایمبیسی سے بھی مشاورت کی جس میں ایمبیسی میں تعینات سفیر جناب معین الحق اور انکے عملے نے بھرپور تعاون کا یقین دلایا اور ایمبیسیڈر صاحب نے اس پروگرام کو عملی جامہ پہنانے کیلئے کمیونٹی ممبران کی زبردست پزیرائی کی اور بےحد مفید مشورے دئیے ساتھ ہی ساتھ ایمبیسی ممبران کی موجودگی میں تمام میٹنگز ہوئیں
پاکستانی کمیونٹی کے تمام اراکین جو اس فیسٹول میں حصّہ لےرہے ہیں سب نے بڑھ چڑھ کر اس پراجیکٹ میں حصّہ لیا اور تمام انتظامات بھاگ دوڑ بخوبی احسن نبھائی
گراؤنڈ انتظامات سے لیکر سٹالز فیشن اینڈ کلچرل شوز گیمز پتنگ بازی دیگر انٹرٹینمنٹ کے ساتھ سکیورٹی انتظامات کمیونٹی اراکین نے بہت دانشمندانہ طریقے سے ان تمام امور کو آخری شکل دیدی ہے جبکہ پاک ایمبیسی نے بھی تعاون کرتے ہوئے مایہ ناز گلوکار احمد جواد کو مدعو کیا ہے
اب سب کو بے چینی سے ان لمحات کا انتظار ہے جب پاکستانی کمیونٹی فرانس میں آزادی کا جشن جوش و خروش سے منائنگے ہر لب پر پاکستان کی سلامتی کی دعائیں جو ہر لمحہ رہتی ہیں پر جشن کی موقع پر دعاؤں کیساتھ ساتھ لبوں پر مختلف ملی نغمے رقصاں ہونگے رنگ برنگے پیرہن مختلف صوبائی رنگ و نور سے بھرے بچے جوان اور بوڑھے جبکہ جدت کے انوکھے حسین و جمیل لباس زیب تن کئے پاکستانیت سے جڑے لہلہاتے پیرہن فخریہ انداز میں پیش ہونگے جبکہ معصوم بچے بچیاں پاکستان کے ملی نغموں پر آزادی کی نعمت کی خوشی سے سرشار پیش پیش ہونگے اس ایک لمحے کے انتظار میں آنکھیں بھیگ رہی ہیں اور دعا گو ہیں کہ ہمارے اورسیز بہن بھائیوں کا یہ اتحاد قائم و دائم رہے اتحاد اور اتفاق کی ایک تاریخ رقم ہونے جارہی ہے ۔ سفارتخانہ پاکستان پیرس ، سفیر پاکستان معین الحق نے اپنے عمل سے ثابت کیا ہے کہ اگر سفارتخانہ چاہے تو کمیونٹی متحد بھی ہوسکتی ہے اور ایک پلیٹ فارم سے پاکستان کے امیج کو بہتر کرنے کیلئے اپنی تمام توانائیاں بھی صرف کرنے پر تیار ہوسکتی ہے۔ جیسا کہ اس فیسٹیول کے موقع پر ہورہا ہے۔ سفارتخانہ پاکستان کی طرف سے پاک کمیونٹی کے ساتھ شانہ نشانہ کھڑے ہونے پر ان کی اس محبت اور پاکستانیت کو سلام۔ پاک ایمبیسی آپکا بیحد شکریہ
شکریہ پاکستان
پاکستان زندہ باد

خبر کو سوشل میڈیا پر شئیر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں