585

بارہ ربیع الاول یوم ولادت یا یوم وصال؟

علامہ پیر محمد تبسم بشیر اویسی
بعض حضرات ،سادہ لوح مسلمانوں کو یہ کہہ کر ان کے ایمان افروز جذبات کو مجروح کرنے کی ناپاک کوشش کرتے ہیں کہ ١٢ربیع الا ول نبی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کی وفات شریف کا دن ہے۔ اس لئے اس روز خوشی منانے کا جواز ہی پیدا نہیں ہوتا بلکہ یہ تو غم افسوس اور سوگ کا دن ہے ۔چنانچہ قاضی محمد سلیمان اپنی کتاب رحمة اللعالمین میں رقمطرازہیں کہ ١٢ ربیع الاول ١١ھ یوم دو شنبہ وقت چاشت تھا کہ جسم ا طہر سے روح انور نے پرواز کیا۔اس وقت عمر مبارک ٦٣ سال قمری پر ٤ دن تھی۔ ” اِنّٰا للّٰہ وَاِ ناَّ اِلَےْہِ رَاجِعُوْن۔” (رحمة اللعالمین جلد اول صفحہ ٣٢٣)
١٢ ربیع الاول بنی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا یوم وفات ہے۔اس روز خوشیاں منانے والے اپنے نبی ۖکی وفات پر خوشیاں مناتے ہیں۔ان کا ضمیرو ایمان مردہ ہے۔ان کو نہ اپنے نبیۖکا پاس ہے نہ ان سے حیا۔یہ لوگ روز قیامت خدا تعالیٰ کو کیا جواب دیں گے۔محمد عربی ۖکو کیا منہ دکھائیں گے۔
کیا ١٢ ربیع الاول بنی کریم صلی اللہ علیہ وسلم کا یوم وفات ہے ؟نہیں نہیں ہرگز نہیں۔اس موضوع پر مورخین ومحققین اسلام کا نکتہ نظر اختصاراً پیش خدمت ہے۔
پیر کادن:۔اگرچہ یہ بات طے ہے کہ آپ ۖ کی ولادت با سعادت اور وفات شریف پیر کے دن ہوئی ۔ لیکن وفات شریف کیلئے ١٢ ربیع الاول کی تاریخ کو خاص کرنا کسی معتبر دلیل سے ثابت نہیں۔یہ بات نہ تو صحابہ کرام رضوان اللہ علیھم اجمعین سے ثابت ہے نہ ہی تابعین سے۔ لہذا بعد میں کسی کا ١٢ ربیع لاول کو تاریخ وفات قرار دینا ہرگز درست نہیں۔
روایت شریف سے استدلال:۔معترضین ١٢ ربیع الاول کو وفات شریف ثابت کرنے کے لئے ایک روایت جو کہ حضرت عائشہ اورحضرت ابن عباس سے منسوب ہے سے استدلال کرتے ہیں ۔مگر اس موقع پر اس روایت کے راوی کی حیثیت پر تبصرہ نہیں کرتے ۔حالا نکہ اہل علم حضرات پر یہ بات مخفی نہیں ہے کہ اس روایت کی سند محمد بن عمرو اقدی ایک ایسا راوی ہے ۔جس کے بارے میں اسحاق بن راہویہ ،امام علی بن مدین،امام ابو حاتم الرازی اور نسائی نے متفقہ طور کہا ہے کہ واقدی اپنی طرف سے درپیش گھڑ لیا کرتا تھا۔امام یحییٰ بن معین کے نزدیک واقدی ثقہ یعنی قابل اعتبار نہیں ہے۔ امام احمد بن حنبل نے فرمایا واقدی کذاب ہے۔حدیثوں میں تبدیلی کر دیتا تھا۔بخاری شریف اور ابو حاتم رازی نے کہا کہ واقدی کی حدیثیں تحریف سے محفوظ نہیں۔امام زہبی نے فرمایا کہ واقدی کے سخت ضعیف ہونے پر آئمہ جرح وتبدیل کا اجماع ہے۔ (میزان الاعتدال جلد ٢ ،ص،٣٦-٤٢٥ مطبوعہ ہند قدیم ۔)
معلوم ہوا کہ اس روایت کے سخت ضعیف ہونے پر محدثین ومحقیقین اسلام کا اجماع ہے ۔لہذا اس روایت سے استدلال کرنا باطل ہے۔ بفضلہ تعالیٰ! اگر ہم ١٢ ربیع الاول کو تاریخ ولادت ثابت کرنے کیلئے دلائل اکٹھا کرنا شروع کریں تو اس موضوع پر پوری کتاب تیار ہو سکتی ہے لیکن اختصار کے پیش نظر زیر قلم مضمون میں فقط یہ ثابت کریں گے کہ ١٢ ربیع الاول حضور پر نور شافع یوم النشور ۖکا یوم وصال نہیں ہے۔
١٢ ربیع الا ول کا تاریخ وفات نہ ہونے پر ناقابلِ تردید دلیل:مورّخِ اسلام امام ابو القاسم عبد الرحمن السّہیلی ارشاد فرماتے ہیں:”وکیف ما دار الحال علی ھذا الحساب فلم یکن الثانی عشر من ربیع الاول یوم الاثنین بوجہ۔” (الروض الا نف جلد ٢ ،ص ٣٧٢)
یعنی اس حساب پر کسی طرح بھی حال دائر ہو مگر ١٢ ربیع الاول کو یوم وفات سوموار کسی صورت میں نہیں آسکتا۔یہی مضمون امام شمس الدین الذھبی،ابن کثیر ،امام نور الدین علی بن احمد السمہوری بن برہان الدین الحلبی وغیرہ سے بھی منقول ہے۔ (تاریخ اسلام للذہبی جزارلسیرة النبویہ ص ٤٠٠-٣٩٩، وفاء الوفاء جلد ١ص ٣١٨، البدایہ والنہایہ جلد ٥ ص ٢٥٦ سیرة حلبیہ جلد ٣ ص ٤٧٣ )محقیقین ومورخین اسلام کی مذکورہ دلیل کو پرکھنے کیلئے تاریخ اسلام کی کسی پختہ تاریخ و یوم کا معلوم ہونا ضروری ہے۔ اس مقصد کیلئے یوم عرفہ ١٠ ھ کو ٩ ذی الحج کی تاریخ اور جمعة المبارک کا دن ہونے پر مختصر دلائل پیش کرتے ہیں ۔تا کہ اس تاریخ سے تقویم کی رو سے نتیجہ سامنے آ سکے۔ یوم عرفہ کو تاریخ سے تقویم کی رو سے نتیجہ سامنے آ سکے۔ یوم عرفہ کو تاریخ ٩ ذی الحجہ ١٠ ھ اور دن جمعة المبارک کا تھا۔٩ ذی الحجہ ١٠ھ کو حضور پر نور شافع یوم النشور صلی اللہ علیہ وسلم نے خطبہ حجة الوداع ارشاد فرمایا اسی روزیہ آیت نازل ہوئی۔”الیوم اکملت لکم دینکم و اتممت علیکم نعمتی و رضیت لکم الا سلام دیناً۔” (المائدہ ،آیت نمبر٣) ” یعنی آج میں نے تمہارے لئے تمہارا دین کامل کر دیا اور تم پر اپنی نعمت پوری کر دی اور تمہارے لئے اسلام کو بطور دین پسند کیا۔(کنزالایمان شریف)یہ آیت حجة الوداع میں عرفہ کے روز جو جمعہ کو تھا ،بعد عصر نازل ہوئی۔ بخاری ومسلم کی حدیث میں ہے کہ حضرت عمر رضی اللہ تعالیٰ عنہ کے پاس ایک یہودی آیا اور اس نے کہا اے امیر المومنین ! آپ کی کتاب میں ایک آیت ہے ۔اگر وہ ہم یہودیوں پر نازل ہوتی تو ہم روز نزول کو عید مناتے۔فرمایا کون سی آیت؟ اس نے یہی آیت ”الیوم اکملت لکم——پڑھی۔ آپ نے ارشاد فرمایا میں اس دن کو جانتا ہوں جس میں یہ نازل ہوئی تھی۔اور اس کے مقام نزول کو بھی پہچانتا ہوں۔وہ مقام عرفات کا تھا اور دن جمعہ کا۔ (خزائن العرفان)
ترمذی شریف میں حضرت ابن عباس سے مروی ہے آپ سے بھی ایک یہودی نے ایسا ہی کہا ۔آپ نے فرمایا کہ جس روز یہ نازل ہوئی اس دن ٢ عیدیں تھیں۔جمعہ، عرفہ۔ (خزائن العرفان)
یہ آیت جیسا کہ شیخین نے حضر ت عمر سے روایت کیا ،عصر کے وقت جمعہ کے روز ذوالحجہ کی نویں تاریخ ،حجة الوداع میں جو کہ ١٠ھمیں تھا۔
نازل ہوئی ہے۔ (حاشیہ القرآن الحکیم مع ترجمعہ شاہ رفیع الدین دہلوی ومولانا اشر ف علی تھانوی ف١٠ ص ١١٩ مطبوعہ تاج آرٹ پر یس کراچی)
جب یہ آیت نازل ہوئی تو اس وقت آپ ۖ مکہ معظمہ میں حجة الوداع کے مبارک موقع پر عرفہ کے دن، جمعہ کے روز عضباء ناقہ پر سوار تھے۔ (ترجمعہ مولانا محمود الحسن مع حاشیہ و فوائد القرآن ص ١٧٢)
یہ آیت حجة الوداع کے موقع پر عرفہ کے روز جمعہ کے دن عصر کے وقت نازل ہوئی جبکہ میدان عرفات میں حضرت خیر الانام ۖ کی اونٹنی کے گرد چالیس ہزار سے زائد اتقیاء ابرار رضوان اللہ علیھم اجمعین کا مجمع تھا۔ ( ترجمعہ مولانا محمود الحسن مع حاشیہ و فوائد القرآن ص ١٧٣)
نویں ذی الحجہ کو آنحضرت ۖ طلوع آفتاب کے بعد وادی نمرہ میں آکر اترے۔دن ڈھلنے کے بعد یہاں سے روانہ ہو کر عرفات میں تشریف لائے۔(رحمة اللعالمین جلد اول ص نمبر ٢٩٩)
نبی کریم ۖ جب خطبہ سے فارغ ہوئے تو اسی جگہ اس آیت کا نزول ہوا۔ الیوم اکملت لکم دینکم ۔ (رحمة اللعالمین جلد اول ص ٣٠٥ بحوالہ صحیح بخاری عن عمر بن الخطاب )
اس مختصر سی وضاحت سے واضح ہوا کہ یوم عرفہ کو تاریخ ٩ ذی الحجہ ١٠ھ اور دن جمعة المبارک کا تھا۔ اس تاریخ سے حساب شروع کر کے چاند کے طلوع وغروب ہونے کی نسبت سے ذی الحجہ ،محرم اور صفر کے ایام کی تعداد انتیس ٢٩ اور تیس٣٠ متصور کر کے ہر اسلامی مہینہ تقومی نظام کے آئینے میں دیکھتے ہیں کہ آیا ١٢ ربیع الاول شریف کا دن سرکار دو عالم صلی اللہ علیہ وسلم کا یوم وصال ہے یا نہیں؟
٩ ذی الحجہ تا ١٣ ربیع الاول تک تقومی نظام کی رو سے ربیع الاول شریف کو ١،٢،٦،٧،٨،٩،١٣ میں سے کوئی ایک تاریخ نبی کریم ۖ کی تاریخ وفات قرار پاتی ہے جبکہ منکرین میلاد کے دعوی کے برعکس ١٢ ربیع الاول کو سوموار کا دن نہیں آتا ہے۔چنانچہ کتب تواریخ وسیر میں بھی وفات شریف کی تاریخ سے متعلق مختلف روایات موجود ہیں۔اجلئہ تابعین ابن شہاب زہری ،سلیمان بن طرخان اور سعد بن ابراہیم زہری سے اسناد کے سا تھ یکم١،دو ٢ ربیع الاول کو وفات نبوی ۖ منقول ہے۔
علامہ شبلی نعمانی نے بھی یکم ربیع الاول کو یوم وفات قرار دیا ہے۔(سیرة النبیۖ ۔جلد ٢)محمد بن عبدالوہاب کے بیٹے شیخ عبد اللہ نے آٹھ ربیع الاول کو یوم وفات قرار دیا ہے۔ ( مختصر سیرة الر سول ۖ)
دعوتِ فکر وعمل :۔وہ جن کو دعوی ہے کہ ١٢ ربیع الاول ہی سرکار صلی اللہ علیہ وسلم کا یوم وصال ہے ۔ معتبر حقائق و دلائل کی روشنی میں ١٢ ربیع الاول ١١ھ کو سوموار کا دن ثابت کریں۔مذکورہ دلائل کا رد بلیغ کریں۔لیکن سوموار شریف کا دن نہ کر سکیں یا پیش کردہ دلائل کا معقول جواب نہ دے سکیں تو ہم عرض کریں گے کہ (١) ١٢ ربیع الاول کو غم اور سوگ کی بجائے آقائے کائنات ۖ کے میلاد کی خوشیاں منایا کریں۔ (٢) محبوبان و مقبولان خدا کی تنقیص کی بجائے توقیر وعظمت کے پہلوجات بیان فرمائے جائیں اور ہر ممکن ادب واحترام کا خیال رکھاجائے۔

خبر کو سوشل میڈیا پر شئیر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں