208

میں افغانستان میں قیام امن کے لیے 2 روزہ مذاکرات آج سے روس کے دارالحکومت ماسکو میں شروع ہوں گے

طالبان اور افغانستان کی اپوزیشن جماعتوں کے رہنما ماسکو مذاکرات میں شرکت کریں گے، جس کے دوران افغان مفاہمتی عمل اور غیرملکی افواج کے ممکنہ انخلاء کے بعد کی صورتحال پر تبادلہ خیال کیا جائے گا۔

ماسکو(ورلڈ پوائنٹ نیوز) خبررساں ادارے نے پاکستانی نجی ٹی وی کے حوالے سے بتایا ہے کہ ماسکو میں ہونے والے مذاکرات میں طالبان کی نمائندہ قیادت اور افغانستان کے سابق صدر حامد کرزئی بھی شریک ہوں گے۔

ماسکو روانگی سے قبل حامد کرزئی کا کہنا تھا کہ امن، اتحاد، خودمختاری اور سب کے لیے ترقی کا پیغام لے کر جارہا ہوں۔

مذاکرات میں حصہ لینے والی نمایاں شخصیات میں گلبدین حکمت یار، سید منصور نادری، محمد محقق، پاکستان میں طالبان کے سابق سفیر عبدالسلام ضعیف، حکمت کرزائی، اسماعیل خان، عطا محمد نور اور شاہ نواز تانائی شرکت کریں گے۔

اس سے قبل طالبان نے افغان صدر اشرف غنی اور ان کی حکومت سے مذاکرات کرنے سے صاف انکار کردیا تھا اور اسے امریکا کی کٹھ پتلی حکومت قرار دیا تھا۔

اس سے قبل قطر کے شہر دوحا میں طالبان اور امریکا کے درمیان ہونے والے مذاکرات میں افغان حکومت کو شامل نہیں کیا گیا تھا، 6 روز تک جاری رہنے والے مذاکرات کے بعد فریقین نے اہم سمجھوتے پر اتفاق کیا تھا۔

سوشل میڈیا پر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں