140

ہم چاہتے ہیں کہ ہمارے پاکستان کے ساتھ تعلقات اور بھی مضبوط ہوں اور اس میں ہر سطح پر کام ہورہا ہے،ماریہ زخارووا

ماسکو (ورلڈپوائنٹ) ماسکو میں ہونے والی وزرارت خارجہ کی پریس بریفنگ میں روسی وزارت خارجہ کی ترجمان ماریہ زخارووا نے پاک روس تعلقات ، امریکہ کی ایران کو راکٹ حملے کی دھمکی سمیت عالمی امور پر گفتگو کی.

”ورلڈ پوائنٹ” کے چیف ایڈیٹر و نمائندہ 92 نیوز روس شاہد گھمن نے بریفنگ کے دوران صحافیوں کے سوالات کے سیکشن میں جب سوال کیا کہ گزشتہ ماہ بشکیک میں ہونے والی شنگھائی تعاون تنظیم کے اجلاس میں پاکستان کے وزیراعظم عمران خان اور روسی صدر ولادیمیر پوتن کے درمیان ہونے والی غیر رسمی ملاقات ہوئی جبکہ پاکستان اور روس کے تعلقات تاریخ کی بلند ترین سطح پر ہیں. کیا روس سی پیک میں سرمایہ کاری کرنے کا ارادہ رکھتا ہے؟

جس پر ماریہ زخارووا نےجواب دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان روس کے تعلقات بہت تیزی سے آگے بڑھ رہے ہیں اور ہم چاہتے ہیں کہ ہمارے اور پاکستان کے تعلقات اور بھی مضبوط ہو ں اور اس سلسلہ میں ہر سطح پر کام ہو رہا ہے اور یہ مسلسل اعلی سطح پر اس بات کی تصدیق ہے. انہوں نے کہا کہ وہ سی پیک کے حوالے سے آئندہ میٹنگ میں اس کا جواب دیں گی.

سینئرصحافی شاہد گھمن سوالات کے سیکشن میں اپنا دوسراسوال کیا کہ ایران اور امریکہ کے درمیان ہونے والی کشیدگی کو کس طرح ختم کیا جاسکتا ہے اور اس میں روس اپنا کیا کردار ادا کررہا ہے؟

جس پرماریہ زخارووا کا کہنا تھا کہ ایران اور امریکہ کی حالیہ صورتحال ہمارے لئے اور خطے کے لیے پریشانی کا باعث ہے امریکہ ایران کو دھمکیاں دے رہا ہے ان دھمکیوں سے امریکہ کی پوزیشن واضح نہیں ہو رہی کہ وہ کیا چاہتا ہے انہوں نے کہا کہ امریکہ کو ایران سے کس چیز کا خطرہ ہے جو وہ واضح نہیں کرتا انہوں نے کہا کہ امریکہ کی ایران بارے میں کوئی پالیسی نہیں ہے جس کی وجہ سے انہوں نے ایران کو راکٹ داغنے کی دھمکی دے کر دنیا کو پریشان کر دیا تھا خطہ پہلے سے ہی جنگ میں مصروف ہے جس نے پورے خطے کو اپنی لپیٹ میں لیا ہوا ہے۔ انہوں نے کہا کہ ہم نے دیکھ لیا کہ جنگوں کا نتیجہ کیا ہوتا ہے ان جنگوں نے مشرقِ وسطیٰ کی کئی ریاستوں کو برباد کر دیا ہے ان جنگوں نے کئی ممالک کے لوگوں کو تکلیف اور اذیت کے ساتھ قوموں کو ہراساں کیا ہے یہ ریاستیں جن کا انفراسٹرکچر ۔تعلیم۔ثقافت۔ سکیورٹی صدیوں میں بنے تھے سب تباہ و برباد کردیا گیا ان میں لیبیا کی مثال ہمارے سامنے ہے

Press briefing of Maria Zakharova spokeswoman of ministry of foreign affairs Russia…. She answered questions of Shahid Ghumman correspondent of 92 News Russia.

Gepostet von 92 News Russia am Sonntag, 7. Juli 2019

انہوں نے کہا کہ امریکہ جب چاہے کسی بھی ملک کو دھمکیاں دیتا ہے اور اور اس ملک کے خلاف جنگ کا اعلان کردیتا ہے جبکہ ایران کو راکٹ حملے سے ختم کرنے کی دھمکی ناقابل برداشت ہے ایران ایک جمہوری ملک ہے تو ایسے ملک کو جنگ میں دھکیلنا خطے کے لئے جو پہلے سے ہی جنگ زدہ ہے اور روس اپنی واضح پوزیشن کے ساتھ ان پالیسیوں کے حق میں نہیں ہے انہوں نے کہا کہ روس خطے میں امن چاہتا ہے اور جنگ کے خلاف ہے روس دنیاوی اصولوں اور قانون کا احترام کرتا ہے اور اسی کی پیروی کرتا ہے

Gepostet von 92 News Russia am Samstag, 6. Juli 2019

انہوں نے کہا کہ چار سال تک ایران اور امریکہ کے درمیان معاہدہ رہا تب تک جب امریکہ نے یکطرفہ خلاف ورزی کر کے اس معاہدے کو توڑا۔ انہوں نے کہا کہ روس نے ہمیشہ اپنی بات کھل کر کی ہے اور اپنی پوزیشن واضح کی ہے امریکہ کی ایران کو دھمکیاں غیر قانونی اور ہمارے لئے تشویش کا باعث ہیں۔ روس، امریکہ، ایران اور خطے کے دوسرے ممالک کے مفادات کو ساتھ لے کر مسئلے کا حل چاہتا ہے کیونکہ جنگ سے خطے میں تباہی و بربادی ہوگی جو کہ روس بالکل نہیں چاہتا.

مذکورہ خبر7 جولائی کو رونامہ 92 نیوز کے پاکستان کے تمام ایڈیشنز میں صفحہ اول پر سپرلیڈ کے طورپر شائع کی گئی…

سوشل میڈیا پر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں