21

گوجرانوالہ تاریخ کا سب سے بڑا سیاسی قصبہ اروپ ایک سوسال کے بعد سیاست سے مکمل آؤٹ

گوجرانوالہ(امتیاز اعوان سے) گوجرانوالہ تاریخ کا سب سے بڑا سیاسی قصبہ اروپ ایک سوسال کے بعد سیاست سے مکمل آؤٹ ہو گیا مسلم لیگ ن اور پی ٹی آئی نے اپنے اپنے امیدواروں کو بالآخر ٹکٹ نہ دیئے جس سے علاقہ بھر میں ایک عجیب سا سوگ کا سماں پیدا ہو گیا پاکستان بننے سے قبل چوہدری محمد حسین بھنڈر ہندوستان اسمبلی کے 9سال تک ایم ایل اے رہے

بعدازاں مختلف عہدوں کے بعد ا ن کے بیٹے چوہدری محمد انور بھنڈر ، ایوب خاں اور ذوالفقار علی بھٹو کے ادوار میں سپیکر مغربی پاکستان رہے پھر ضیاء الحق دور میں مجلس شوریٰ کے ممبر اور دو مرتبہ سینیٹر بھی رہے ان کے بھتیجے چوہدری شاہد اکرم بھنڈر دو مرتبہ ایم پی اے اور پھر ایم این اے منتخب ہوکر وزیر مملکت برائے قانون و انصاف بن گئے اروپ میں سے ہی ان کے سیاسی مخالف پیر غلام فرید 1985میں پہلی مرتبہ چوہدری شاہد اکرم بھنڈر کے مقابلے میں ایم پی اے منتخب ہوگئے

بعدازاں اب تک وہ خود دو مرتبہ ایم پی اے ان کی بیٹی شازیہ سہیل میر پہلے ایم پی اے منتخب ہوئیں بعدازاں مخصوص سیٹ پر ایم این اے نامزد ہوئیں مگر اب چوہدری محمد انور بھنڈر اور ان کے بھتیجے چوہدری شاہد اکرم بھندر کے درمیان سیاسی اختلافات کی وجہ سے علاقہ بھر میں بھاری سیاسی اثرورسوخ رکھنے والا خاندان باہمی اختلافات کی وجہ سے پی ٹی آئی اور ن لیگ کی طرف سے ایک بھی ٹکٹ حاصل نہ کر سکا

جبکہ ان کے سیاسی مخالف اروپ کے ہی رہائشی اور میاں نواز شریف کے انتہائی قریبی دوست پیر غلام فرید بھی مسلم لیگ ن کا ٹکٹ حاصل نہ کر سکے ایک ہی گاؤں میں ہونے کے باوجود تینوں فریقین کے شدید سیاسی اختلافات کی وجہ سے دوسرے علاقوں کے لوگوں کو اس حلقہ کے ٹکٹ دے دی گئی ہیں اسطرح ایک سو سال کے بعد اروپ سے سیاست کا خاتمہ ہوگیا۔
اللہ کرے کہ کوئی ٹکٹ لازمی مل جائے تاکہ اروپ کی سیاست کا سلسلہ جاری رہے۔علاقہ بھر کے لوگوں میں انتہائی تشویش پائی جا رہی ہے

سوشل میڈیا پر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں