125

فیس بک کی جانب سے انٹرنیٹ سیٹلائٹ منصوبے کا آغاز

سان فرانسسكو(ورلڈ پوائنٹ نیوز) سوشل میڈیا کے مشہور پلیٹ فارم فیس بک نے دنیا کے پس ماندہ اور غریب ممالک میں انٹرنیٹ کی نشریات پہنچانے کے لیے اگلے سال ’انٹرنیٹ سیٹلائٹ‘ زمین کے گرد مدار میں بھیجنے کا اعلان کیا ہے۔

امریکا میں فیڈرل کمیونی کیشنز کمیشن کی ای میل سے معلوم ہوا ہے کہ فیس بک 2019ء کے پہلے چند ماہ میں ’ایتھنا‘ نامی انٹرنیٹ سیٹلائٹ زمین کے نچلے مدار میں روانہ کرے گی۔ دستاویز کے مطابق یہ سیٹلائٹ دنیا کے پسماندہ اور غریب خطوں میں انٹرنیٹ کی سہولت فراہم کرے گی۔ اس کے لیے فیس بک نے ’پوانٹ ویو ٹیک‘ نامی کمپنی بھی بنائی ہے۔

دستاویز کے مطابق جولائی 2016ء میں پہلی بار فیس بک نے ایسی سیٹلائٹ کا خیال پیش کیا جو خلا سے انٹرنیٹ کی سہولت زمین تک فراہم کرے گی۔ فیس بک نے اسے اگلی نسل کے براڈ بینڈ اسٹرکچر کے لیے ایک اہم سنگِ میل قرار دیا ہے۔ واضح رہے کہ اس سے قبل فیس بک نے انٹرنیٹ شعاع بھیجنے والے ڈرون کا تصور بھی پیش کیا تھا۔
انٹرنیٹ سیٹلائٹ بہت چھوٹی ہوں گی اور زمین کے نچلے مدار (لو ای او) میں گردش کریں گی۔ قبل ازیں فیس بک نے باقاعدہ اعلان کیا تھا کہ وہ اپنے انٹرنیٹ ڈرون ’اقیلا‘ پر کام بند کررہا ہے کیونکہ آن لائن سہولت فراہم کرنے والے ڈرون میں خاطر خواہ کامیابی نہیں مل سکی ہے۔

ایم آئی ٹی ٹیکنالوجی ریویو ویب سائٹ کے مطابق فیس بک خلا میں اپنی موجودگی کے بارے میں بہت سنجیدہ ہے اور ایتھنا سیٹلائٹ پر کام شروع کردیا گیا ہے تاہم واضح رہے کہ بوئنگ، اسپیس ایکس اور ون ویب سمیت کئی ٹیکنالوجی کمپنیاں اپنے اپنے انٹرنیٹ سیٹلائٹس اور راکٹ پر کام کررہی ہیں۔

سوشل میڈیا پر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں