260

روس کے سابق جاسوس کو کیمیائی زہر دینے پر امریکہ کی روس پر پابندیوں کا اعلان

واشنگٹن (ورلڈ پوائنٹ نیوز) امریکہ کا کہنا ہے کہ وہ برطانیہ میں سابق روسی جاسوس کو زہریلے مواد کے ذریعے ہلاک کرنے کی کوشش پر روس کے خلاف تازہ پابندیاں عائد کرے گا۔سابق روسی جاسوس اور اُن کی بیٹی رواں سال مارچ میں برطانیہ کے علاقے سیلسبری کے شاپنگ سینٹر کے بینچ پر بے ہوش پائے گئے تھے۔ جس کے بعد پولیس نے ‘احتیاطی تدبیر’ کے طور پر وہ ریسٹورینٹ بھی بند کروا دیا تھا۔برطانیہ کے تفتیش کاروں نے اس حملے کا الزام روس پر عائد کیا ہے لیکن روس نے اس حملے میں اپنے ملوث ہونے کی تردید کی ہے۔روس کے سابق جاسوس سرگئے سکرپیل روسی فوج میں انٹیلیجنس آفیسر تھے اور 2006 میں برطانیہ کے لیے جاسوسی کرنے کے جرم میں انھیں 13 سال قید کی سزا ہوئی تھی۔انھیں امریکہ اور روس کے مابین 2010 میں طے پانے والے ‘جاسوسوں کے تبادلے کے معاہدے’ کے تحت رہا کیا گیا تھا۔ اس معاہدے کے تحت روس نے دس امریکی جاسوس رہا کیے تھے جبکہ ماسکو نے چار قیدیوں کو رہا کیا تھا۔کرنل سکرپیل بعد میں برطانیہ آ گئے تھے۔

روس نے امریکہ کی جانب سے ان نئی پابندیوں پر تنقید کرتے ہوئے اسے ‘ظالمانہ’ قرار دیا ہے۔بدھ کو جاری ہونے والے بیان میں امریکہ کے محکمہ خارجہ نے روس کے خلاف پابندیوں کے اطلاق کی تصدیق کی۔محکمہ خارجہ کی ترجمان ہیتھر نوریٹ نے کہا کہ اس بات کی تصدیق ہو گئی ہے کہ ‘بین الااقوامی قوانین کی خلاف ورزی کرتے ہوئے کیمیائی یا بائیولوجیکل ہتھیار استعمال کیے یا پھر اپنے ہی شہری کے خلاف کیمیائی مہلک ہتھیار استعمال کیے ہیں۔’برطانوی حکومت نے روس کے خلاف امریکہ کی ان اقدامات کا خیر مقدم کیا ہے۔برطانیہ کے محکمہ خارجہ نے اپنے بیان میں کہا کہ ‘سیلسبری میں کیمیائی ہتھیار کے استعمال پر بین الاقوامی برادری کے منہ توڑ جواب سے روس کو یہ پیغام جاتا ہے کہ اُس کے جارہانہ اور غیر محتاط رویے کو ایسے ہی نظر انداز نہیں کیا جائے گا۔’امریکہ میں روس کے سفارت خانے نے امریکی پابندیوں پر تنقید کرتے ہوئے کہا ہے کہ اس حملے میں روس کو ملوث کرنے کے الزامات ‘مبالغہ آرائی’ پر مبنی ہیں۔روسی سفارت خانے نے کہا کہ ‘روس کو شواہد اور حقائق نہ سننے کی اب عادت ہو گئی ہے۔’ بیان میں کہا گیا ہے کہ ‘ہم سیلسبری میں اس جرم کرنے والے کا پتہ لگانے کے لیے شفاف انکوائری کے حق میں ہیں۔’

روس پر عائد نئی پابندیوں کا اطلاق 22 اگست سے ہو گا اور اس کے بعد روس حساس الیکٹرانک آلات اور دیگر ٹیکنالوجی کو درآمد نہیں کر سکتا ہے۔امریکی محکمہ خارجہ کا کہنا ہے کہ اگر روس نے دوبارہ کیمیائی ہتھیار استعمال نہ کرنے کی یقین دہانی نہیں کروائی اور اقوام متحدہ کے معائنہ کاروں کو اجازت نہ دی تو پھر روس کے خلاف 90 دن کے بعد مزید ‘سخت’ پابندیاں عائد کی جائیں گی۔’ایک اہلکار نے بتایا کہ یہ تیسری مرتبہ ہے جب امریکہ نے روس پر شہریوں کے خلاف کیمیائی اور بائیولوجیکل ہتھیاروں کے استعمال کرنے کی تصدیق کی ہے۔ماضی میں کیمیائی ہتھیاروں کا استعمال شام اور شمالی کوریا میں کیا گیا۔

سوشل میڈیا پر شیئر کریں

اس خبر پر اپنی رائے کا اظہار کریں

اپنا تبصرہ بھیجیں